جب جنگ ِ جمل شروع ہونے سے پہلے حضرت نے ابن عباس کو زبیر کے پاس اس مقصد سے بھیجا کہ وہ انہیں اطاعت کی طرف پلٹائیں، تو اس موقعہ پر ان سے فرمایا:

طلحہ سے ملاقات نہ کرنا، اگر تم اس سے ملے تو تم اس کو ایک ایسا سرکش بیل پاؤ گے جس کے سینگ کانوں کی طرف مڑے ہوئے ہوں، وہ منہ زور سواری پر سوار ہوتا ہے اور پھر کہتا یہ ہے کہ یہ رام کی ہوئی سواری ہے ،بلکہ تم زبیر سے ملنا اس لئے کہ وہ نرم طبیعت ہے اور اس سے یہ کہنا کہ تمہارے ماموں زاد بھائی نے کہا ہے کہ تم حجاز میں تو مجھ سے جان پہچا ن رکھتے تھے اور یہاں عراق میں آکر بالکل اجنبی بن گئے ،آخر اس تبدیلی کا کیا سبب ہے ۔

 علامہ رضی فرماتے ہیں کہ اس کلام کا آخری جملہ “ فما عد اممابدا” جس کا مطلب یہ ہے کہ اس تبدیلی کا کیا سبب ہُوا، سب سے پہلے آپ ہی کی زبان سے سنا گیا ہے ۔