اے لوگو! مجھے تمہارے بارے میں سب سے زیادہ دو باتوں کا ڈر ہے۔ ایک خواہشوں کی پیروی ، اور دوسرے امیدوں کا پھیلاؤ خواہشوں کی پیروی وہ چیز ہے، جو حق سے روک دیتی ہے اور امیدوں کا پھیلاؤ آخرت کو بھلا دیتا ہے۔ تمہیں معلوم ہونا چاہیے کہ دنیا تیزی سے جارہی ہے اور اس میں سے کچھ باقی نہیں رہ گیا ہےمگر اتنا ہے کہ جیسے کوئی انڈیلنے والابرتن کو انڈیلے تو اس میں کچھ تری باقی رہ جاتی ہے اور آخرت کا ادھر رخ لیے ہوئے آرہی ہے اور دنیا و آخرت ہر ایک والے خاص آدمی ہوتے ہیں، تو تم فرزندِ آخرت بنو، اور ابناء دنیا نہ بنو، اس لیے کہ ہر بیٹا روزِ قیامت اپنی ماں سے منسلک ہو گا ۔

آج عمل کا دن ہے اور حساب نہیں ہے اور کل حساب کا دن ہو گا، عمل نہ ہو سکے گا۔

علامہ رضی کہتے ہیں کہ الحذّا کے معنی تیز رو کے ہیں اور بعض نے الجذا ء روایت کیا ہے (اس روایت کی بنا پر ہی معنی ہوں گے کہ دنیا کی لذتوں کا سلسلہ جلد ختم ہو جائیگا۔